Meri Shairi Shab-o-Roz

Meri Shairi: Asool

اصول

انتظار سے بھر زندگی مجھے قبول ہے
میرا وجود میرے غمخوار قدرت کی بھول ہے

جس منزل پہ پہنچ کر مسافر پلٹ جائے
اس منزل سے بہتر پاؤں کی دھول ہے

دنیا کے گلشن میں ہر پھول مسکرا رہا ہے
جو کبھی کھل نہ سکا ہو میرا دل وہ پھول ہے

میں نے سنا ہے مسعودؔ سے کہ دنیا نے کہا
’اپاہنجوں کا اس دنیا میں جینا فضول ہے‘

حق نے جب پوچھا روزِ محشر پہ عذاب کا
چپکے سے زندگی کہہ دونگا کہ یہ نام معقول ہے

یہ تنہائیاں ہی تیری زندگی کا حاصل ہیں مسعودؔ
انہیں دل سے لگاکرجی لو، یہ پیار کا محصول ہے

تجھے سمجھایا تھا میں نے کہ دنیا کے بازار میں
ہر چیز پہ سُود مانگنا، سوداگروں کا اصول ہے

 

مسعودؔ

About the author

Masood

ایک پردیسی جو پردیس میں رہنے کے باوجود اپنے ملک سے بے پناہ محبت رکھتا ہے، اپنے ملک کی حالت پر سخت نالاں،۔ ایک پردسی جس کا قلم مشکل ترین سچائی لکھنے سے باز نہیں آتا، پردیسی جسکے قلم خونِ جگر کی روشنائی سے لکھتا ہے، یہی وجہ ہے کہ وہ تلخ ہے، ہضم مشکل سے ہوتی ہے، پردسی جو اپنے دل کا اظہار شاعری میں بھی کرتا ہے

Add Comment

Click here to post a comment