Meri Shairi Shab-o-Roz

Apna Daur-e-Muhabbat Yaad Aata Hai

Apna Daur-e-Muhabbat Yaad Aata Hai

Apna Daur-e-Muhabbat Yaad Aata Hai

اپنادورِمحبت یادآتا ہے

جب کوئی کسی سے آنکھ چراتا ہے
اپنا دورِ محبت یاد آتا ہے
جب کوئی صنم کو پسِ پشت ڈال کر
کسی رقیب سے ہاتھ ملاتا ہے
اپنا دورِ محبت یاد آتا ہے
جب آہوں کا نوحہ وفاؤں کی لاش پر
اک ٹوٹا ہوا دل گاتا ہے
اپنا دورِ محبت یاد آتا ہے
جب کوئی کسی کو منتظر چھوڑ کر
پردیس چلا جاتا ہے
اپنا دورِ محبت یاد آتا ہے
جب کوئی مجبوریوں کی ردا تان کر
سب عہد و پیمان بھول جاتا ہے
اپنا دورِ محبت یاد آتا ہے
جب کوئی محبتوں کا تاج محل توڑ کر
اک نئی دنیا جا بساتا ہے
اپنا دورِ محبت یاد آتا ہے
جب کوئی کسی کو بے خبر چھوڑ کر
اک نئی سیج سجاتا ہے
اپنا دورِ محبت یاد آتا ہے
جب کوئی نوشہ کسی ہاری دلہن کا
گھونگھٹ اٹھاتا ہے
اپنا دورِ محبت یاد آتا ہے
اور کوئی اپنی وفاؤں کا لاشہ
اپنے کندھوں پہ اٹھاتا ہے
اپنا دورِ محبت یاد آتا ہے
بے جرم سزا، بے کفن لاشہ
مسعودؔ بھی کیا انعام پاتا ہے
اپنا دورِ محبت یاد آتا ہے

مسعودؔ

Apna Daur-e-Muhabbat Yaad Aata Hai

Shab-o-roz

About the author

Masood

ایک پردیسی جو پردیس میں رہنے کے باوجود اپنے ملک سے بے پناہ محبت رکھتا ہے، اپنے ملک کی حالت پر سخت نالاں،۔ ایک پردسی جس کا قلم مشکل ترین سچائی لکھنے سے باز نہیں آتا، پردیسی جسکے قلم خونِ جگر کی روشنائی سے لکھتا ہے، یہی وجہ ہے کہ وہ تلخ ہے، ہضم مشکل سے ہوتی ہے، پردسی جو اپنے دل کا اظہار شاعری میں بھی کرتا ہے

Add Comment

Click here to post a comment

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.