Meri Shairi Shab-o-Roz

Meri Shairi: Aey Dil Unhein Kah Dey

Meri Shairi: Aey Dil Unhein Kah Dey

Meri Shairi: Aey Dil Unhein Kah Dey

اے دل انہیں کہہ دے

اے دل انہیں کہہ دے ہمیں مزید ستائیں
سنا کے اپنے وداع کی خبر‘ جی نہ جلائیں
مری وفا نے پہنا کفن‘ انکے ہاتھ میں لگی مہندی
یہ سماں ہے عید کا کہ مقتل گاہ‘ یہ معمہ سلجھائیں
اک گھر میں نوحہ خوانی‘ اک گھر میں بجے شہنائی
اک گھر سے اٹھے جنازہ‘ اک گھر سے ڈولی اٹھائیں
کوئی بھول کر گئی ساعتوں کو نئی راہوں پر چلا ہے
کوئی جلا کر یادوں کے چراغ‘ انہیں دے صدائیں
eid, henna, janaza, kafan, mehndi, naveed, wafa, chiragh, sada, yaad, khabar
Meri Shairi: Aey Dil Unhein Kah Dey

About the author

Masood

ایک پردیسی جو پردیس میں رہنے کے باوجود اپنے ملک سے بے پناہ محبت رکھتا ہے، اپنے ملک کی حالت پر سخت نالاں،۔ ایک پردسی جس کا قلم مشکل ترین سچائی لکھنے سے باز نہیں آتا، پردیسی جسکے قلم خونِ جگر کی روشنائی سے لکھتا ہے، یہی وجہ ہے کہ وہ تلخ ہے، ہضم مشکل سے ہوتی ہے، پردسی جو اپنے دل کا اظہار شاعری میں بھی کرتا ہے

Add Comment

Click here to post a comment