Meri Shairi Shab-o-Roz

Meri Shaairi: Keh Bohat Tadpa Hoon

Meri Shaairi: Keh Bohat Tadpa Hoon
Yaad-e-Gori

Meri Shaairi: Keh Bohat Tadpa Hoon

کہ بہت تڑپاہوں میں تیری یاد میں گوری

Meri Shaairi: Keh Bohat Tadpa Hoon

دیکھ تو کس قدر سوز ہے میری فریاد میں گوری
کہ بہت تڑپا ہوں میں تیری یاد میں گوری

وفا کا انجام تو ہو گیا، بے رخی کی بھی انتہا ہو
اس قدر نہ ہرجائی بن کہ گلی گلی رسوا ہو
کیا مصلحت ہے اس میں، کیوں چھوڑ گئی ہو تنہا مجھے
میں نے یہ ضرور کہا، جب چاہو آزما لینا مجھے
یہ میں نے کب کہا، میرے عَدُو کی ڈولی میں بیٹھ جانا
ہاں ضرور اک روز میری قبر پہ آکر آنسو بہانا
بعد میرے، میری یاد کے لمحے ڈسیں گے باربار تجھے
بن کے میرے جذبات کے ترجمان، کہیں گے باربار تجھے

کہ بہت تڑپا ہوں میں تیری یاد میں گوری
دیکھ تو کس قدر سوز ہے میری فریاد میں گوری

سنوارنے بیٹھے گی جب تو اپنے گیسُو آئینے میں
نظر آئے گی تجھ کو میری صورت ہر سُو آئینے میں
چرائے گی جس سمت بھی نظر، دیکھے گی اک ضُو آئینے میں
تمہارا دل خودبخود بڑھے گا اس سُو آئینے میں
ہو کے بے سُدھ پوچھے گی یہ بات آئینے سے
کہ کیسے ہیں میرے مسعودؔ کے حالات آئینے سے
سن کے آئینے کا جواب تو ہو جائیگی بے قرار گوری
اضطراب بڑھے گا، وہ جب کریگا، میرے دل کا اظہار گوری

کہ بہت تڑپا ہوں میں تیری یاد میں گوری
دیکھ تو کس قدر سوز ہے میری فریاد میں گوری

خیالوں میں گم سم تو جب پہنچے گی اس آستاں پہ گوری
ایک ہی کلمہ پھر ہو گا تیری زباں پہ گوری
‘‘یہ تو ہے میرے مسعودؔ کا گھر، یہ ہے میری جائے عِفَّت‘‘
سانسیں ہو جائینگی پراگندہ، سوچوں میں آجائیگی رِفعَت
پکارے گی تو ہو کے دل کے ہاتھوں مجبور گوری
پہنچے گی تیری آواز اس گھر میں دُور دُور گوری
مگر جواب تجھ کو نہ ملے گا، صنم تجھ کو نہ پکارے گا
ڈھونڈ ڈھونڈ کے اپنے صنم کو دل تیرا ہارے گا
اس ویرانے میں سنائی دیگی تجھے اک صدا گوری
‘ جس حال میں مسعودؔ تھا، اب تو اس میں رہے گی سدا گوری‘

کہ بہت تڑپا ہوں میں تیری یاد میں گوری
دیکھ تو کس قدر سوز ہے میری فریاد میں گوری

anjaam, berukhi, jazbaat, muslehat, qabar, urdu poetry, wafa, urdu shayeri.

Shab-o-roz

About the author

Masood

ایک پردیسی جو پردیس میں رہنے کے باوجود اپنے ملک سے بے پناہ محبت رکھتا ہے، اپنے ملک کی حالت پر سخت نالاں،۔ ایک پردسی جس کا قلم مشکل ترین سچائی لکھنے سے باز نہیں آتا، پردیسی جسکے قلم خونِ جگر کی روشنائی سے لکھتا ہے، یہی وجہ ہے کہ وہ تلخ ہے، ہضم مشکل سے ہوتی ہے، پردسی جو اپنے دل کا اظہار شاعری میں بھی کرتا ہے

Add Comment

Click here to post a comment