Meri Shairi Shab-o-Roz

Meri Shairi: Deewana Hoon

Meri Shairi: Deewana Hoon

Meri Shairi: Deewana Hoon

دیوانہ ہوں دیوانگی کیے جاتا ہوں

تیری ہی آرزؤں میں جیے جاتا ہوں
دیوانہ ہوں! دیوانگی کیے جاتا ہوں

دے کر تجھ کو محبتوں کی فراوانی
پرانی کہانی کو نیا رنگ دئیے جاتا ہوں

محبت کے فسانے میں کوئی ہرجائی کا پوچھے
ترا نام نہ آئے ہونٹوں کو سیے جاتا ہوں

ترے نام لگا دی ہے اپنی کائنات بھی
بسا کر تجھ کو دل جیے جاتا ہوں

حالات سے ھار کر الوداع کہہ دیا
خوشیاں تجھے دیکر غم لیے جاتا ہوں

Meri Shairi: Deewana Hoon

مسعودؔ

About the author

Masood

ایک پردیسی جو پردیس میں رہنے کے باوجود اپنے ملک سے بے پناہ محبت رکھتا ہے، اپنے ملک کی حالت پر سخت نالاں،۔ ایک پردسی جس کا قلم مشکل ترین سچائی لکھنے سے باز نہیں آتا، پردیسی جسکے قلم خونِ جگر کی روشنائی سے لکھتا ہے، یہی وجہ ہے کہ وہ تلخ ہے، ہضم مشکل سے ہوتی ہے، پردسی جو اپنے دل کا اظہار شاعری میں بھی کرتا ہے

Add Comment

Click here to post a comment