Meri Shairi Shab-o-Roz

Meri Shairi: Khawab Sahil Key Kyun Dekhey

Meri Shairi: Khawab Sahil Key Kyun Dekhey

خواب ساحل کے کیوں دیکھے

خواب ساحل کے کیوں دیکھے، جب بھنور سامنے تھا
میں پیاسا کیوں کھڑا رہا جب کہ سمندر سامنے تھا
اداسیوں کا مداوا کیسے ہو جب مسیحا ہی نہ چاہے
زخم ڈھونڈتے رہ گئے، زخموں کا گھر سامنے تھا
بڑے آئے تھے بن کے ہمدرد، جو درد ہی نہ بٹا سکے
بات وفا کی چلی تو مجبوریوں کا دفتر سامنے تھا
آج اگر ملنا گوارا نہیں تو کل تک اے قاصد!
ہر موڑ پہ وہ اجنبی کھڑا کیونکر سامنے تھا
اہلِ گلستان میں بحث تھی کسی رحمدل سے متعلق
ہم جو دیکھنے گئے اسے تو اک پتھر سامنے تھا
دکھوں کی رہگذر میں ہم ہی ہمسفر تھے اسکے
آج وہ دامن چھڑا گئے، جب خوشیوں کا در سامنے تھا
رات کے اندھیرے میں وہ سایہ بھی ساتھ چھوڑ گیا
دن کے اجالے میں جو ایک ہی ہمسفر سامنے تھا
بہت سے نگر گھومے کہیں دل اسقدر نہ دھڑکا
آج دھڑکنِ دل بھی چھن گئی، جب صنم کا نگر سامنے تھا
کس طرح عہد نبھاؤں ان کو بھول جانے کا
ہر طرف سے نگاہ چرائی، وہ مگر سامنے تھا
وفاؤں کا سبق کِس سے سیکھوں اے مسعودؔ ؟
جس محفل میں گیا بے وفائیوں کا مظہر سامنے تھا
مسعودؔ
Meri Shairi: Khawab Sahil Key Kyun Dekhey

About the author

Masood

ایک پردیسی جو پردیس میں رہنے کے باوجود اپنے ملک سے بے پناہ محبت رکھتا ہے، اپنے ملک کی حالت پر سخت نالاں،۔ ایک پردسی جس کا قلم مشکل ترین سچائی لکھنے سے باز نہیں آتا، پردیسی جسکے قلم خونِ جگر کی روشنائی سے لکھتا ہے، یہی وجہ ہے کہ وہ تلخ ہے، ہضم مشکل سے ہوتی ہے، پردسی جو اپنے دل کا اظہار شاعری میں بھی کرتا ہے

Add Comment

Click here to post a comment