Meri Shairi Shab-o-Roz

Bikhrey Huwoun Ko Bikhairna

Bikhrey Huwoun Ko Bikhairna

Bikhrey Huwoun Ko Bikhairna

اعجاز

بکھرے ہوؤں کو بکھیرنا دنیا کا اعجاز ہے
سدا خوش رہو اے صنم میرے دل کی آواز ہے

اس خوشی میں احساسِ غمی بھی رہے ساتھ تمہارے
وہ باتیں تڑپائیں تجھے، تو جن کی ہمراز ہے

تیری بیداغ زندگی میں جب انتظار کی آگ لگے
تو سمجھ لینا کہ پیار کا یہ بھی اک انداز ہے

شکوہ کر رہی ہو کہ میں کوس رہا ہوں تجھ کو
تیری یہ ادا سنگدلی نہیں تو کیا نیاز ہے؟

کاش کہ تو راہِ وفا میں دیکھتی مسعوؔد کو
دلوں کو توڑ دینا کہاں کا ناز ہے؟

مسعود

Bikhrey Huwoun Ko Bikhairna

Shab-o-roz

About the author

Masood

ایک پردیسی جو پردیس میں رہنے کے باوجود اپنے ملک سے بے پناہ محبت رکھتا ہے، اپنے ملک کی حالت پر سخت نالاں،۔ ایک پردسی جس کا قلم مشکل ترین سچائی لکھنے سے باز نہیں آتا، پردیسی جسکے قلم خونِ جگر کی روشنائی سے لکھتا ہے، یہی وجہ ہے کہ وہ تلخ ہے، ہضم مشکل سے ہوتی ہے، پردسی جو اپنے دل کا اظہار شاعری میں بھی کرتا ہے

Add Comment

Click here to post a comment

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.