Meri Tehreerein Shab-o-Roz

Meri Tehreer: Waqt

Meri Tehreer: Waqt
Waqt

Meri Tehreer: Waqt

وقت

وقت زخم بھی ہے اور وقت مرہم بھی! وقت خوشی بھی ہے اور وقت غم بھی! وقت سہارا بھی ہے اور وقت تنہائی بھی! وقت اپنا بھی ہے اور وقت پرایا بھی! وقت کے ساتھ زخموں کے منہ بھی بھر جاتے ہیں! اور وقت کے ساتھ دلوں کے روگ بھی مدہم ہوتے ہیں۔

وقت ہمیں ضائع کررہا ہے

اکثر سننے میں آتا ہے کہ ہم وقت کو ضائع کررہے ہیں۔! درحقیقت ہم وقت کو نہیں بلکہ وقت ہمیں ضائع کررہا ہے۔

انسان دن بدن ناکارہ ہوتا جا رہا ہے، انسان کی جگہ پرزوں نے لے لی ہے۔! ہم آج کے وقت میں انہیں پرزوں (جن میں کمپیوٹر بھی شامل ہے)کے لیے ہی رہ گئے ہیں۔

وہ اپنائیت، وہ چاہت، وہ ہمسائیگی، وہ بھائی چارہ، وہ دکھ سکھ کی کہانیاں،! وہ اونچ نیچ میں مل بیٹھنا، وہ شام کے وقت یارلوگوں کی محفلیں، وہ سہیلیوں کی جھرمٹیں،! وہ ماں باپ کی خدمتیں، وہ بہن بھائیوں کا شوروغل، وہ درّوں،! سراؤں، بیٹھکوں، گلیوں، دکانوں میں بحثیں سب غارت ہوتی جارہی ہیں۔

اب تو جسے دیکھوپرزوں کے سامنے منجمد ہے۔! کوئی ٹی وی کے آگے، کوئی سیٹلائٹ کے آگے، کوئی وی سی آر یا ڈی وی ڈی لگائے تو کوئی کانوں میں والک مین ٹھونسیں،! کوئی موبائل پر باتیں کرتا اور کوئی کمپیوٹر پر بیٹھا نظرآئے گا:

اِنسان نے وقت کو وہ ترقی دی ہے! کہ وقت نے جواباً انسان کو ضائع کردیا ہے۔

Meri Tehreer: Waqt

بے برکتی

حضرت انسؓ کی روایت ہے کہ قیامت سے پہلے وقت اِس طرح تیزرفتاری سے گزرے گا کہ سال مہینوں کے برابر، مہینے گھنٹوں کے برابر اور گھنٹے ایک چنگاری کے برابر ہوجائیں گے۔

آج ہم وقت کے اِسی دور میں ہیں، ہفتے کا آغاز ہوتا نہیں کہ ختم ہوجاتا ہے۔! ۲۰۰۵ کے گزرنے کا پتہ ہی نہیں چلا۔

ایسی کیا وجہ ہے کہ ہمیں وقت کے گزرنے کا احساس نہیں ہوتا؟

ہم اللہ تعالیٰ سے دعا مانگتے ہیں کہ ہمارے رزق میں برکت ڈال دے،! اللہ تعالیٰ ہماری دعا سنتے ہیں اور ہمارے رزق میں برکت ہوتی ہے۔! تھوڑے سے رزق سے سارا خاندان سیر ہوجاتا ہے۔

ہم دعامانگتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ ہمارے پیسہ میں برکت دے تو کم پیسہ بہت ہو جاتا ہے۔! یہی وہ برکت ہے جو وقت میں سے اٹھالی گئی ہے اور اِسی وجہ سے بہت سا وقت بھی ہمیں کم لگتا ہے۔

ہم گھنٹوں بستر پر کروٹیں بدلتے رہتے ہیں مگر نیند ندارد ہوتی ہے۔! اگر ہم اللہ تعالیٰ سے اپنے وقت میں برکت مانگیں تو چند لمحوں کی نیند کافی ہوتی ہے۔

ہمارے روزوشب ایسے کاموں میں مصروف رہنے لگے ہیں جن میں اللہ کی برکت نہیں ہوتی۔

ہمارے عموماً سبھی کام ہوجاتے ہیں مگر کیا ہمارے کاموں میں برکت بھی ہے؟ شاید نہیں!

اور یہی وہ برکت ہے جو وقت میں سے نکال دی گئی ہے! اور تین سو پینسٹھ دنوں کا طویل سال بھی ایک لمحہ مانند تصور ہوتا ہے جوآیا اور گیا۔

آج انسانوں کی عمریں اوسطاً 65سال ہمارے ممالک میں اور یورپ میں اکثر 75-80سال کی ہوتی ہیں۔

مگر اِس عمر کا مصنف آج وہ کچھ نہیں لکھ سکتا جوامام غزالی ؒ نے اپنی صرف پچپن برس کی عمر میں لکھا ہے۔! امام صاحب نے اتنی تصانیف چھوڑی ہیں کہ انہیں پڑھنے کے لیے ساٹھ سال کی عمر درکا رہے۔

امام غزالی ؒ کے کام میں برکت تھی اور انہیں پچپن سال کافی تھے۔ ہمارے وقت میں یہ برکتیں اٹھالی گئی ہیں۔

Meri Tehreer: Waqt

وقت کے ساتھ

کہتے ہیں کہ وقت کے ساتھ ساتھ چلنا چاہیے۔ یہ تو ایک بحث طلب بات ہے کہ چلنا چاہیے کہ نہیں۔

یہ سچ ہے کہ ہم ایک ایسے وقت میں پہنچ چکے ہیں جہاں وقت کی قدر نہ کرنے والا بہت پیچھے رہ جاتا۔

آج ہمارے اندرونی حالات اِس بات کا منہ بولتا ثبوت ہیں کہ اہل اسلام نے وقت کی قدر نہیں کی اور آج ہم ذلیل و رسوا ہورہے ہیں۔

ہم آج بھی وقت کی رسوائی کررہے ہیں مگر درحقیقت وقت ہمیں نست سے نابودکر رہا ہے۔

ہماری بیداری کا وقت ناجانے کب آئے گا؟ اور اگر ہم آج اگر بیدار ہوتے بھی ہیں تو ہمیں اپنا کھویا ہوا وقت بحال کرنے کے لیے بہت وقت درکار ہوگالیکن جتنی جلدی ہوآغازہونا چاہیے۔

دنیا میں کسی اور جگہ وقت کا ساتھ دیا جائے یا نہ دیا جائے ہمارے صدر صاحب کے ارادوں سے تو لگتا ہے کہ ہم کھوئے ہوئے وقت کی بحالی چاہتے ہیں۔

مگر جو بحالی وہ کررہے ہیں وہ شاید وقت کے ساتھ چلنے کی انہیں بحالی تو دے مگر وہ ایک قوم کی خودی کی موت کا آغاز ہے!

ہم شاید ابھی تک وقت اور وقت کی نزاکت کو نہیں سمجھ سکے!!!

مسعود    /   کوپن ہیگن

current time, life, message pegham, pakistan, urdu articles, urdu novels, where we stand today

Shab-o-roz

About the author

Masood

ایک پردیسی جو پردیس میں رہنے کے باوجود اپنے ملک سے بے پناہ محبت رکھتا ہے، اپنے ملک کی حالت پر سخت نالاں،۔ ایک پردسی جس کا قلم مشکل ترین سچائی لکھنے سے باز نہیں آتا، پردیسی جسکے قلم خونِ جگر کی روشنائی سے لکھتا ہے، یہی وجہ ہے کہ وہ تلخ ہے، ہضم مشکل سے ہوتی ہے، پردسی جو اپنے دل کا اظہار شاعری میں بھی کرتا ہے

Add Comment

Click here to post a comment