Sports

Sports: Humaarey Super Stars!

Sports: Humaarey Super Stars!

Sports: Humaarey Super Stars!

ہمارے سُپر اسٹارز

معیار

اگر فردِواحدکا معیاردیکھا جائے توپاکستانی کرکٹ ٹیم میں دنیا کے بہترین کھلاڑی موجود ہیں۔! مگر جب یہ گیارہ کھلاڑی مل کر ایک ٹیم بنتی ہے تو بلا شبہ پاکستانی ٹیم دنیا کی سب سے گھٹیا!، بیہودہ اور پرلے درجے کی للّو ٹیم ثابت ہوتی ہے۔

کھیل کے میدان میں ان کی ناقص پرفارمنس، قوم کے لیے انتہائی شرمندگی کی بات ہے۔!کبھی میں سوچتا ہوں جیسی پرفارمنس پاکستانی سپوتوں کی کھیل کے میدان میں ہے! اگر ایسی پرفارمنس دیناکوئی جرم ہوتا تو ہمارے اِن جیالوں کو ہرروزکوڑے لگائے جاتے۔!مگر افسوس ہم ان ناکام جیالوں کو قومی ہیروزمانتے ہیں۔

پاکستانی ٹیم کی نفسیاتی بیماری یہ ہے کہ ہمارے پاس بہت سارے ہیروز ہیں۔!بلکہ کوئی بھی ٹیم سلیکٹ کی جائے، اُس میں گیارہ کے گیارہ ہیروز ہیں، بلکہ ۱۲واں بندہ بھی ہیرو ہے۔!میدان میں موجود ہوں یا باہر بیٹھے ہوں، اِن کی اداؤں سے یہی لگتا ہے گویاکشمیر کو فتح انہوں نے ہی کیا ہے۔!

مسئلہ

سب سے بڑا مسئلہ یہ ہے کہ ہمارے کھلاڑی کھیل کے میدان میں خودغرض سیاستدان ہیں،! جو اپنا مقصد حاصل کرنے کی خاطراپنے ملک کی انا کو بھی داؤ پر لگانے سے دریغ نہیں کرتے۔! یہ تسکین پانے کے کی خاطریہ جیالے اپنے ہی ملک کی ہار پر سٹہ کھیلنے پر بھی شرمندگی محسوس نہیں کرتے۔!کھیلوں کی دنیا میں اِس سے بڑا جرم اورکوئی نہیں ہوتا،! مگر ہمارے مردہ ضمیر سفیر یہ کام بھی سر اٹھا کر کرتے ہیں۔! اِس پر غضب یہ کہ ہماری قوم انہیں پھر بھی ہیروز بناتی ہے،جو حقیقت میں زیروز ہیں۔!

اسی گندی سیاست کی وجہ سے ماضی میں بھی بہت سے اچھے اور حقیقی پروفیشنل کھلاڑیوں کامستقبل یا تو تباہ ہواہے! یا پھر وقت سے پہلے ہی ختم ہوگیاہے۔!جاویدمیانداد اس سیاست کا شکار ہونے والے پہلے صحیح معنوں میں سپراسٹار تھے۔!جاوید کے بعد جو سب سے بہترین بلے باز پاکستانی ٹیم کو ملا، اور جس کو اس سیاست کی بھینٹ چڑھایا گیا وہ تھا باسط علی۔!عامرسہیل ایک عمدہ اوپنر اس سیاست کی نظر ہوگیا۔!موجودہ ٹیم میں دیکھا جائے تو ایک سوال ابھرتاہے: کیا اب یوسف یوحنا بھی اسی سیاست کی بھینٹ چڑھنے لگا ہے؟؟!موجودہ ٹیم میں کوئی بھی بلے باز ایسا نہیں جس پر اعتمادکیا جاسکے، یوحنا ایک reliableکھلاڑی ہے۔!

سپراسٹار

سوچنے کی بات یہ ہے کہ ہمارے پاس اچھے کھلاڑیوں کی کمی نہیں،! اس کے باوجود اس قدر للّو کھیل کھیلنے والے ٹیم میں شامل کیوں ہیں؟؟!جس قدر لاپروائی کا کھیل یہ جیالے پیش کرتے ہیں انہیں دیکھ کر سخت شرمندگی ہوتی ہے۔!یہ لوگ اپنے دماغ کو استعمال کرنے کی بجائے اپنے جذبات سے کھیلتے ہیں، اور شاٹس کا انتخاب کرتے وقت ان کے ذہن میں ہیرواِزم گردش کرتی نظر آتی ہے۔! یوں لگتا ہے یہ بوگس سپراسٹارز بیٹنگ کرتے وقت اپنے آپ کو لوگوں کی نظروں میں جھولتا ہوا دیکھتے ہیں۔اِس قدر بیہودہ شارٹس تو امیچر ameutureکھلاڑی بھی نہیں کھیلتے۔

کبھی میں سوچتاہوں ہماری ٹیم کینیا کی ٹیم سے بہتر نہیں۔! اگر ورلڈکپ میں دوگروپس بنائے جائیں، اور ان دونوں گروپس میں پروموشن/ریلیگیشن ہو تو ہماری ٹیم ایک ’لفٹ ٹیم‘ ثابت ہو!، جو کبھی سیکنڈ گریڈ سے پروموٹ کرکے فرسٹ گریڈ تک پہنچے مگر اگلے ہی سال ڈیگریڈ ہو کر دوبارہ سیکنڈگریڈ میں پہنچ جائے۔! اِس قدر گھٹیا معیار ہے ہماری ٹیم کا۔

اور یہ معیار اُس وقت تک ٹھیک نہیں ہوگا جب تک یہ جیالے اپناامیج درست نہیں کرتے۔! اور آف دی فیلڈ اپنے قرتوں کا احتساب کرکے آن دی فیلڈ اپنی کارکردگی پر توجہ نہیں دیتے!

 
مسعودؔ  –  کوپن ہیگن 5 ستمبر 2002

Sports: Humaarey Super Stars!

Shab-o-roz

About the author

Masood

ایک پردیسی جو پردیس میں رہنے کے باوجود اپنے ملک سے بے پناہ محبت رکھتا ہے، اپنے ملک کی حالت پر سخت نالاں،۔ ایک پردسی جس کا قلم مشکل ترین سچائی لکھنے سے باز نہیں آتا، پردیسی جسکے قلم خونِ جگر کی روشنائی سے لکھتا ہے، یہی وجہ ہے کہ وہ تلخ ہے، ہضم مشکل سے ہوتی ہے، پردسی جو اپنے دل کا اظہار شاعری میں بھی کرتا ہے

Add Comment

Click here to post a comment